بھارتی وزیر خارجہ کا 3 روزہ دورہ بیجنگ ناکام ہوگیا

مقبوضہ کشمیر سے متعلق بھارتی فیصلے کی چین کی جانب سے شدید مذمت، لداخ کو بھارتی یونین ٹیریٹری بنانا چین کی علاقائی خودمختاری پر ضرب لگانے کی کوشش قرار دے دیا

بیجنگ : بھارتی وزیر خارجہ کا 3 روزہ دورہ بیجنگ ناکام ہوگیا مقبوضہ کشمیر سے متعلق بھارتی فیصلے کی چین کی جانب سے شدید مذمت، لداخ کو بھارتی یونین ٹیریٹری بنانا چین کی علاقائی خودمختاری پر ضرب لگانے کی کوشش قرار دے دیا۔ تفصیلات کے مطابق کشمیر کے مسئلے سے توجہ ہٹانے اورپاکستان کو ناکام کرنے کیلئے بھارتی وزیرخارجہ کا دورہ چین ناکام ہوگیا ہے۔
چین نے بھارتی وزیر خارجہ کے دورے کے دوران ہی مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے یکطرفہ اقدام کوایک بار پھر مسترد کردیا۔ بھارتی وزیرخارجہ کی چینی ہم منصب کو راضی کرنے کی کوششیں ناکام ہوگئیں جس کے بعد اس حوالے سے چین نے بھارت کو ٹکا سا جواب دے دیا۔ بھارتی وزیر خارجہ سبرامنیم جے شنکر چینی قیادت کو راضی کرنے کیلئے بیجنگ پہنچے تھے جہاں انہوں نے چینی نائب صدر وانگ کی شن اور وزیرخارجہ وانگ ای سے ملاقات کی۔
چینی وزارت خارجہ کی ترجمان کے مطابق ملاقات میں چینی وزیرخارجہ نے مقبوضہ کشمیر کی خودمختار حیثیت کو ختم کرنے اور لداخ کو وفاقی علاقہ قرار دینے کے بھارتی فیصلے کی شدید مذمت کی ۔ چینی رہنماؤں نے ملاقات میں بھارتی وزیر خارجہ پر واضح کردیا کہ چین مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کی مخالفت کرتا ہے۔ بھارت سرحدوں کے معاملے پر احتیاط کرے۔
لداخ کو بھارتی یونین ٹیریٹری بنانا چین کی علاقائی خودمختاری پر ضرب لگانے کی کوشش ہے۔ دوسری جانب اس حوالے سے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ چین بھی سمجھتا ہے بھارت کا حالیہ اقدام غیر آئینی، یکطرفہ اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کی قراردادوں کے منافی ہے۔ اس لیے سیکورٹی کونسل کا خصوصی اجلاس طلب کیا جائے،بھارتی غیر آئینی اقدام کو زیربحث لایا جائے۔

تاریخ اشاعت : بدھ 14 اگست 2019

Share On Whatsapp