Mexican Mayor Forced To Dress Up As A Woman For Failing To Fulfil Campaign Promises

انتخابی مہم کے دوران کیے گے وعدے پورے نہ کرنے پر میئر کو عورتوں کے کپڑے پہنا دئیے گئے

انتخابی مہم کے دوران اکثر امیدوار ایسے وعدے کرتے ہیں، جو پورے نہ کیے جا سکیں  لیکن ووٹر ان چیزوں پر زیادہ رد عمل نہیں دیتے۔تاہم میکسیکو کے ایک چھوٹے سے ٹاؤن کے رہائشیوں نے  انتخابی مہم کے دوران کیے گئے وعدے  پورے نہ کرنے پر  میئر کو چار دنوں تک سڑکوں پر عورتوں کے کپڑے پہنا کر گھمایا ہے۔
جاویر سیباسچین جیمینز سانتیز نے ہوئیشتان کے ٹاؤن میں الیکشن مہم کے دوران وعدہ کیا کہ وہ پانی کے مقامی نظام میں بہتری لائیں گے۔

لیکن وہ اپنے ووٹروں کی  توقعات پر پورا نہیں اترے۔
پچھلے مہینے میئر کے  بہانوں اور وعدوں سے تنگ آ کر مقامی لوگوں نے اُن کے دفتر پر دھاوا بول دیا۔ انہوں نے میئر اور میونسپل ٹرسٹی کو خواتین کے کپڑے پہنائے ۔ مقامی افراد نے انہیں 4 دن تک خواتین کے کپڑے پہن کر سڑکوں پر گھومایا ۔ دونوں  چار دن تک عورتوں کے کپڑے پہن کر سڑکوں پر گھومتے رہے  اور گاڑیوں کو روک کر اُن  منصوبوں کے لیے، جنہیں مکمل کرنے کا وعدہ انتخابی مہم میں کیا گیا تھا،  چندہ جمع کرتے رہے۔

مقامی رپورٹروں کو انٹرویو دیتے ہوئے میئر نے بتایا کہ وہ انتخابی وعدے پورا کرنا چاہتے تھے لیکن ضروری فنڈز نہ ہونے کی وجہ سے نہ کر سکے۔انہوں نے بتایا کہ 30 لاکھ پیسو یا 1 لاکھ 58 ہزار ڈالر دوسری میونسپلٹیز کو ٹرانسفر کر دیا گیا۔ تاہم انٹرویو کے دوران اُن کے پیچھے کھڑے لوگ انہیں جھوٹ بولنے سے منع کرتے رہے۔مقامی  افراد کا مطالبہ ہے کہ  فنڈز کے حوالے سے تحقیقات کرائی جائیں کہ کہیں یہ فنڈز میئر نے تو نہیں  چرا لیے۔
سوشل میڈیا میئر اور ٹرسٹی  تصاویر سوشل میڈیا پر کئی دنوں سے وائرل ہیں۔ ان تصویروں کو دیکھ کر بہت سے صارفین کا کہنا   ہے کہ اُن کے مقامی حکام بھی ایسی ہی سزاؤں کے مستحق ہیں۔

تاریخ اشاعت : پیر 5 اگست 2019

Mexican Mayor Forced To Dress Up As A Woman For Failing To Fulfil Campaign Promises
Share On Whatsapp
سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں