بجٹ منظور نہ ہونے دینے کا اعلان کرنے والے وفاق اور صوبوں کی ترقی کے لئے سنجیدہ نہیں

حکومت نے سندھ کیلئے ماضی کے مقابلہ میں 200 ارب روپے اضافی رکھے ہیں , بلوچستان اور خیبرپختونخوا میں ضم ہونے والے قبائلی اضلاع کی ترقی کو خاص ترجیح دی گئی ہے , اپوزیشن اراکین نے بجٹ سنا نہ ہی پڑھا، پھر کس بنیاد پر اسے عوام دشمن قرار دے رہے , وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ٹویٹ

اسلام آباد : وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ بجٹ منظور نہ ہونے دینے کا اعلان کرنے والے وفاق اور صوبوں کی ترقی کے لئے سنجیدہ نہیں، حکومت نے سندھ کیلئے ماضی کے مقابلہ میں 200 ارب روپے اضافی رکھے ہیں، بلوچستان اور خیبرپختونخوا میں ضم ہونے والے قبائلی اضلاع کی ترقی کو خاص ترجیح دی گئی ہے، اپوزیشن اراکین نے بجٹ سنا نہ ہی پڑھا، پھر کس بنیاد پر اسے عوام دشمن قرار دے رہے۔
منگل کو اپنے ٹویٹ میں انہوں نے کہا کہ ملکی معیشت تباہی کے دہانے پر پہنچانے والے اب عوام کا مزید تیل کیوں نکالنا چاہتے ہیں، نومولود سیاستدان سیاسی بلوغت سے عاری ہیں، انہیں یہ ادراک نہیں کہ یہ بجٹ سندھ سمیت تمام صوبوں کے عوام کے حقوق کے تحفظ کا بھی ضامن ہے، سندھ کے بجٹ کا مقدر اسی وفاقی بجٹ سے جڑا ہے، عمران خان کی عداوت میں سندھ کے عوام سے دشمنی نہ کریں۔
پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے سندھ کیلئے ماضی کے مقابلہ میں تقریباً 200 ارب روپے اضافی رکھے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ مالی سال میں این ایف سی کے تحت 616 ارب روپے کے مقابلہ میں رواں مالی سال میں سندھ کیلئے 815 ارب روپے مختص کئے گئے ہیں، یہ حکومت کا وفاق پاکستان کی اکائیوں کو اہمیت دینے کا ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی بجٹ میں بلوچستان اور خیبرپختونخوا میں ضم ہونے والے قبائلی اضلاع کی ترقی کو خاص ترجیح دی گئی ہے، بجٹ منظور نہ ہونے دینے کا اعلان کرنے والے وفاق اور صوبوں کی ترقی کے لئے سنجیدہ نہیں، جو سیاسی جماعتیں انتخابات میں شکست خوردہ مولانا کی خدمات لے رہی ہیں، اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ عوام ان کے ساتھ نہیں۔

تاریخ اشاعت : منگل 18 جون 2019

Share On Whatsapp