سعودی عرب میں طلباء کو شاندار خبر سُنا دی گئی

وزارت تعلیم نے تمام اسکولوں کی انتظامیہ کو ہدایت کر دی کہ کوئی بھی اُستاد بچے کی مار پیٹ کرے گا نہ اُس سے بدکلامی سے پیش آئے گا

ریاض : سعودی عرب میں زیر تعلیم لاکھوں سکول کے بچوں کو ایسی خبر سُنائی گئی ہے جس نے اُن کے دِلوں کو خوشیوں سے بھر دیا ہے۔ خبر یہ ہے کہ سعودی عرب کے تمام اسکولز چاہے وہ سرکاری ہوں یا پرائیویٹ، وہاں پر اب زیر تعلیم بچوں کو پڑھائی نہ کرنے پر یا نکمی کارکردگی پر نہ تو اُستاد مار پیٹ کر سکے گا اور نہ ہی اُن کے ساتھ غصے میں بدکلامی کرے گا۔ اس لحاظ سے بچوں کو بے پناہ آزادی مِل گئی ہے۔
اُستاد صرف اُن سے باز پُرس کر سکتا ہے، مار پیٹ اور بدزبانی سے کام نہیں لے سکتا۔ وزارت تعلیم نے اس حوالے سے مملکت کے تمام نجی اور سرکاری اسکولز کو ہدایات جاری کر دی ہیں کہ تمام تعلیمی اداروں میں طالب علموں پر کسی بھی قسم کا جسمانی یا زبانی تشدد مکمل طور پر منع ہے۔ اعلامیے میں کہا گیاہے کہ کوئی اسکول ٹیچر یا دیگر عملہ بچوں کی مارپیٹ یا لفظی تشدد سے کام نہیں لے سکتا۔
بچوں کی خراب کارکردگی یا کوئی اور بدتمیزی اور بُری حرکت پر اُنہیں وارننگ دی جائے اور سرزنش کی جائے، مگر اُنہیں ذہنی یا جسمانی تشدد کا حصّہ نہ بنائے جائے۔ یہ پابندی انٹرنیشنل اسکولز پر بھی عائد ہو گی۔ وزارت کی جانب سے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ سکولوں میں بچوں کی مار پیٹ کر کے اُن کی صلاحیتوں کو دبایا نہ جائے، بلکہ اُنہیں محبت اور پیار سے سمجھایا جائے تاکہ وہ اپنے اُستادوں کو دِل سے احترام دیں اور اُن میں خود اعتمادی جنم لے، اسی صورت میں وہ تعلیمی میدان میں بھرپور اندا زسے آگے بڑھ سکتے ہیں۔
اور ان کی مثبت صلاحیتیں اُبھر کر سامنے آتی ہیں۔ جبکہ بچوں کی مار پیٹ، گالم گلوچ ، ڈرانے دھمکانے اور ہراساں کرنے سے تعلیم و تربیت کے مطلوبہ فوائد حاصل نہیں ہو جاتے۔ مار پیٹ طلباء کو تشدد کی جانب اُبھارتی ہے، اور ان میں انتقام کے جذبے کو طاقتور بناتی ہے۔ اس لیے ان سب سے احتیاط برتنا ہی بہتر ہے۔

تاریخ اشاعت : بدھ 11 دسمبر 2019

Share On Whatsapp