بھارتی فوجی محاصرے سے مقبوضہ کشمیر میں مذہبی آزادی بری طرح متاثر ہوئی ہے،نیویارک ٹائمز

واشنگٹن ۔ : امریکی اخبار نیویارک ٹائمز نے کہا ہے کہ بھارتی فوجی محاصرے کی وجہ سے مقبوضہ کشمیر میں مذہبی آزادی بری طرح متاثر ہوئی ہے۔ کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق اخبار نے لکھا کہ مسلم اکثریتی علاقے میں بھارت کی طرف سے جاری کارروائیوں کے نتیجے میں سرینگر کی جامع مسجد کے میناروں سے دن میں پانچ مرتبہ آنے والی اذانوں کی آوازیں گزشتہ چار ماہ سے خاموش ہیں۔
اخبار نے لکھا کہ بھارت نے گزشتہ موسم گرما میں کشمیر میں اضافی فوجی تعینات کرنا شروع کردیے تھے جو پہلے ہی دنیا میں سب سے زیادہ فوجی تعیناتی والے علاقوں میں شامل تھا اوربھارت نے فوجی محاصرہ کرکے شہری حقوق پر سخت پابندیاںعائد کردیں، ہزاروں لوگوں کو گرفتارکیا،انٹرنیٹ اورٹیلیفون سروسز کو معطل اوراہم مساجد کو بند کردیا۔ دریں اثناء بین الاقوامی مذہبی آزادی کے امریکی کمیشن نے ایک پریس ریلیز میں متنازعہ سٹیزن شپ بل کی راجیہ سبھا سے منظوری کی صورت میں بھارتی وزیر داخلہ اور دیگر بھارتی رہنمائوں پر پابندی کی تجویز دی ہے۔
بل کا مقصددستاویزات کے بغیربھارت میں رہنے والے مسلمانوں کو بھارتی شہریت سے خارج کرنا ہے۔ یورپی یونین نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی صورتحال پر تشویش کااظہارکرتے ہوئے علاقے میں نقل وحرکت کی آزادی بحال کرنے کی ضرورت پر زوردیاہے۔ بھارت میںیورپی یونین کے سفیر آسٹوٹو اوگو نے ایک ٹویٹ پیغام میں کہا کہ یورپی ارکان پارلیمنٹ کا دورہ کشمیر یورپی یونین کے پالیسی فیصلے کا مظہر نہیں تھا۔

تاریخ اشاعت : منگل 10 دسمبر 2019

Share On Whatsapp