قیدیوں کو مفت تعلیم دینے والا واحد ادارہ

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کی جانب سے قیدیوں کو مفت تعلیم دینے کا اعلان

اسلام آباد : :علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی وہ واحد یونیورسٹی جو قیدیوں کو مفت تعلیم فراہم کررہی ہے۔علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی (اے آئی یو) سرکاری شعبے کی واحد یونیورسٹی ہے جو 1990 کی دہائی سے ہی قیدیوں کو مفت تعلیم فراہم کر رہی ہے۔جیل کے چاروں طرف بدنما داغ لگنے کی وجہ سے ، جیل میں وقت گزارنے والے قیدیوں کو معاشرے میں واپس آنے میں بہت دشواری ہوتی ہے۔
کم تعلیم یافتہ ہونے کے باعث قیدیوں کو رہائی کے بعد نوکریاں نہیں ملتیں۔2016 میں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی نے ملک بھر کے قیدیوں کے لئے موجودہ تعلیمی پروگراموں اور سہولیات کو جدید بنانے کا فیصلہ کیاتھا۔ تب سے علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی قیدیوں کو میٹرک سے لے کر بی ۔اے تک تعلیم کی پیش کش کرتی ہے ۔علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی نے وفاق محتاسب ، ہائیر ایجوکیشن کمیشن ، اور تمام صوبوں کے جیل محکموں کی مدد سے اپنی سہولیات کو اپ گریڈ کیاہے۔
علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اہلکار کے مطابق قیدیوں کے تعلیمی پروگرام کا مقصد قیدیوں تک تعلیم کا جال بڑھانا ہے۔اہلکار نے بتایا کہ جیل کے دوران تعلیم حاصل کرنے والے قیدی ذمہ دار پاکستانی بن سکتے ہیں۔علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے وائس چانسلر چاروں صوبوں کے انسپکٹر جنرل قید خانوں سے رابطے میں ہیں تاکہ حکام اساتذہ کے ساتھ مل کر کام کریں۔
وائس چانسلر راولپنڈی ، کوئٹہ ، اور کراچی میں جیلوں کا بھی اکثر دورہ کرتے ہیں ، اس دوران وی سی ملاقات کرتے ہیں اور قیدیوں میں کتابیں تقسیم کرتے ہیں۔قیدی جو پروگرام میں حصہ لینے میں دلچسپی رکھتے ہیں انہیں بغیر کسی لاگت کے فارم دیئے جاتے ہیں۔ جب تک وہ جیل میں رہیں گے ، ان کو داخلہ ، ڈگری ، ٹیوشن ، امتحان اور رجسٹریشن فیس سے استثنیٰ حاصل ہے۔
نہ صرف یہ بلکہ علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی آپ اپنی ماو¿ں کے ساتھ سینٹرل جیل کوئٹہ میں جیل میں مقیم بچوں کے لئے کلاس رومز بنانے کا بھی منصوبہ بنا رہی ہے۔منصوبے کی رپورٹ کا حتمی ورڑن حکام کو بھیج دیا گیاہے۔علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے عہدیدار اس منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے حکام کے اگلے سگنل کا انتظار کر رہے ہیں۔قیدیوں کو تعلیم دینے کے علاوہ علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی خودسے نابینا افراد ، ٹرانسجینڈرز اور ڈراپ آوٹ لڑکیوں کو مفت تعلیم فراہم کرتی ہے۔

تاریخ اشاعت : جمعرات 5 دسمبر 2019

Share On Whatsapp