جدہ کے قدیم علاقے میں واقع مارکیٹ میں بھڑکنے والی آگ پر قابو پا لیا گیا

انتظامیہ کی جانب سے لاکھوں ریال کے نقصان کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے

جدہ : گزشتہ روز جدہ کے قدیم علاقے میں واقع ا’لھدل‘ مارکیٹ میں اچانک آگ بھڑک اُٹھی جس نے چند منٹوں میں ہی فرنیچر کے گودام کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ واقعے کی اطلاع ملتے ہی فائر بریگیڈ اور ایمبولینسز موقع پر روانہ کر دی گئیں۔ اُردو نیوز کی رپورٹ کے مطابق شدت سے بھڑکنے والی آگ کو بجھانے میں فائر فائٹرز کو کئی گھنٹے لگ گئے۔ اس حوالے سے شہری دفاع کے علاقائی ترجمان کرنل سعید سرحان نے اخبار کے نمائندہ کو بتایا کہ اس آتش زدگی کے دوران کسی قسم کا کوئی جانی نقصان تو نہیں ہوا، البتہ انہوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ آتش زدگی کے باعث اچھا خاصی مالی نقصان ہوا ہے جس کا تخمینہ لگانے میں کچھ وقت لگے گا۔
کرنل سرحان نے بتایا کہ یہ آگ اسفنج کے گودام سے شروع ہوئی جہاں پر فرنیچر سازی میں استعمال ہونے والی لکڑیاں اور دیگر ساز و سامان موجود تھا، جس کی وجہ سے آگ زیادہ تیزی سے پھیلی۔ آگ بجھانے کی اس کارروائی میں بھاری مشینری کی مدد لی گئی۔ کرنل سرحان نے بتایا کہ آتش زدگی کے وقت خوش قسمتی سے گودام بند ہونے کے باعث اس میں کوئی شخص موجود نہیں تھا، ورنہ کوئی جانی نقصان ہو سکتا تھا۔
آتش زدگی اس قدر خوفناک تھی کہ اس سے اُٹھنے والا دھواں بہت دُور سے بھی دکھائی دے رہا تھا۔ گودام میں بھڑکی آگ بجھانے کے لیے اس کا بھاری دروازہ توڑنے کی خاطر بھاری مشینری کا استعمال کیا گیا۔ اکثر جگہوں پر گاڑھا دھواں ہونے کے باعث فائر فائٹرز کو خاصی مشکل کا سامنا کرنا پڑا۔ کیونکہ عملے کو دھوئیں کے باعث چند میٹر دُور دیکھنے میں بھی بہت دُشواری کا سامنا کرنا پڑا۔ گودام میں آگ بھڑکنے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں۔ امدادی کارروائیوں میں پولیس اور ہلال احمر کی ٹیموں نے بھی حصہ لیا۔

تاریخ اشاعت : جمعرات 21 نومبر 2019

Share On Whatsapp