امریکہ نے انس حقانی سمیت 3 طالبان رہنماؤں کو رہا کردیا

رہنماؤں کی رہائی کے بدلے میں افغان طالبان نے دو امریکی پروفیسرز کو رہا کردیا، افغان حکومت نے فیصلے کی تائید کردی

کابل : امریکہ نے انس حقانی سمیت 3 طالبان رہنماؤں کو رہا کردیا۔ تفصیلات کے مطابق طالبان رہنماؤں کی رہائی کے بدلے میں افغان طالبان نے دو امریکی پروفیسرز کو رہا کردیا ہے۔ افغان حکومت نے بھی امریکی حکومت کے اس فیصلے کی تائید کی ہے۔ ذرائع کے مطابق افغان طالبان کی قید میں موجود دو غیر ملکیوں کو رہا کردیا گیا، امریکیہ کی ایک یونیورسٹی کے پروفیسرز کو امریکی ہیلی کاپٹر کے ذریعے زابل سے روانہ کیا گیا ہے۔
بتایا گیا ہے کہ امریکی پروفیسرز کی رہائی کے بدلے طالبان کے 3 رہنماؤں کو رہا کیا گیا ہے۔افغان طالبان نے اس حوالے سے کہا ہے کہ انہوں نے یرغمال بنائے گئے دو غیر ملکیوں کو رہا کردیا ہے۔ خیال رہے کہ ان دونوں غیر ملکیوں کو 2016 میں کابل سے اغواء کیا گیا تھا۔ افغان پولیس ذرائع نے بتایا ہے کہ آج صبح دس بجے امریکہ کی ایک یونیورسٹی کے دونوں پروفیسرز کو صوبے زابل سے رہا کیا گیا جو امریکی ہیلی کاپٹروں میں زابل سے روانہ ہوئے۔
بتایا گیا ہے کہ رہائی پانے والوں میں امریکا کے کیون کنگ اور آسٹریلیا کے ٹیموتھی ویکس شامل ہیں۔ ابھی تک امریکی سفارت خانے کی جانب سے رہائی والے افراد کے حوالے سے کوئی ردعمل نہیں دیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق زشتہ شام افغانستان کی بگرام جیل سے رہا کیے گئے طالبان کے تین رہنما انس حقانی، حاجی مالی خان اور حافظ راشد بھی قطر پہنچ گئے ہیں۔
افغان صدر اشرف غنی کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ یہ ایک مشکل لیکن اہم فیصلہ تھا اور اسے حکومت کی طرف سے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر اٹھایا گیا اقدام سمجھا جائے۔ افغان حکام پرامید ہیں کہ اس اقدام کے بعد طالبان کے ساتھ امن مذاکرات دوبارہ شروع ہوسکیں گے جبکہ کابل میں انس حقانی و دیگر طالبان رہنماؤں کی رہائی کیخلاف احتجاج بھی کیا گیا ہے۔

تاریخ اشاعت : منگل 19 نومبر 2019

Share On Whatsapp