رانا ثناء اللہ کیس میں پیش ہونے والی اے این ایف ٹیم کی گاڑی کو حادثہ

موٹروے پر گاڑی نے ٹکر مار دی،یہ حادثہ نہیں ہے ہماری گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے۔اے این ایف اہلکاروں کا موقف

لاہور : مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثناء اللہ کیس میں پیش ہونے والی اے این ایف ٹیم کی گاڑی کو حادثہ پیش آیا ہے۔تفصیلات کے مطابق اسلام آباد سے لاہور جانے والی اے این ایف ٹیم کو موٹروے پر حادثہ پیش آیا ہے،للا انٹرچینج کے قریب پیچھے سے آنے والی سفید کار نے اے این ایف گاڑی کو ٹکر ماری۔گاڑی کی ٹکر سے اے این ایف کی گاڑی کا ٹائر پھٹ گیا۔حادثے کا شکار ہونے والے اے این ایف اہلکاروں کا کہنا ہے کہ ہماری گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے۔
جب کہ گاڑی کے ڈرائیور کا بھی یہ موقف ہے کہ یہ واقعہ کوئی حادثہ نہیں ہے بلکہ ہماری گاڑی کو باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت اٹیک کیا گیا ہے۔اس حوالے سے تحقیقات کا بھی آغاز کر دیا گیا ہے۔ابتدائی تحقیقات کے مطابق ٹکر مارنے والی گاڑی میں موجود افراد کی شناخت نہیں ہو سکی۔جب کہ دوسری جانب انسدادِ منشیات کی عدالت نے سابق صوبائی وزیر قانون کی درخواست دوبارہ مسترد کر دی ہے۔
واضح رہے کہ اس سے قبل بھی ستمبر کے مہینے میں رانا ثناء اللہ کی رہائی کی درخواست ضمانت مسترد کر دی گئی تھی۔ جس کے بعد اُن کی اہلیہ نے ہائیکورٹ جانے کااعلان کیا تھا۔ اہلیہ رانا ثنا اللہ کا کہنا تھا کہ ضمانت منسوخی کے خلاف ہائیکورٹ جاوٴں گی، مجھے اْمید ہے کہ انصاف ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ ان غریبوں کی جان چھوٹی جو ناجائز پکڑے ہوئے تھے، ان کی بھی اللہ مدد کرے گا۔
یاد رہے کہ یکم جولائی کو مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثناء اللہ کو گرفتار کر لیا گیا تھا۔ترجمان اے این ایف ریاض سومرو نے رانا ثنا ء اللہ کی گاڑی سے منشیات برآمد ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔رانا ثنا اللہ خان کی گاڑی سے منشیات کی بھاری مقدار برآمد ہوئی اور ان کے خلاف نارکوٹکس ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا جس کے بعد سے وہ جسمانی ریمانڈ پر جیل میں قید ہیں۔رانا ثناء اللہ کی گرفتاری کے بعد ان کی اہلہ بھی میدان میں آگئی تھیں اور انہوں نے اپنے کئی بیانات میں موجودہ حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ تاہم اب شوہر کی درخواست ضمانت مسترد ہونے کے بعد انہوں نے ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

تاریخ اشاعت : ہفتہ 9 نومبر 2019

Share On Whatsapp