ہمیں بابری مسجد کی متبادل زمین نہیں چاہئیے

بابری مسجد کیس کے مسلمان فریق سنی وقف بورڈ کا سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل دائر کرنے کا فیصلہ

نئی دہلی : بابری مسجد کیس کے مسلمان فریق سنی وقف بورڈ نے سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل دائر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔تفصیلات کے مطابق وکیل ظفریاب جیلانی نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ نے تسلیم کیا کہ نماز ہوئی پھر کیسے نظرانداز کر دیا؟ ہم عدالتی فیصلے کا احترام کرتے ہیں لیکن تحفظات برقرار ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ فیصلے سے نہ کسی کی جیت ہوئی نہ ہی ہارا لہذا احتجاج اور مظاہرے نہیں ہونے چاہئیے۔
مسلم فریق کے وکیل نے کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ ہمارے حق میں نہیں۔5 ایکڑ زمین ہمارے لیے کوئی اہمیت نہیں رکھتی،ہماری شریعت کے مطابق ہم اپنی مسجد کسی کو نہیں دے سکتے۔مسجد اللہ کی ہے اور اسے فروخت نہیں کیا جا سکتا۔وکیل ظفریاب جیلانی نے کہا کہ سپریم کورٹ نے تسلیم کیا کہ نماز ہوئی پھر کیسے نظر انداز کر دیا۔ہمارا موقف سمجھا نہیں گیا ہمیں متبادل زمین نہیں چاہئیے۔
واضح رہے کہ بھارتی سپریم کورٹ نے تاریخی بابری مسجد کی شہادت کے کیس کا فیصلے میں مسلمانوں کو مسجد کے لیے متبادل جگہ فراہم کرنے کا حکم دیا ہے. سپریم کورٹ نے حکم میں کہا کہ ایودھیا میں متنازع زمین پر رام مندر تعمیر کیا جائے گا جبکہ مسلمانوں کو ایودھیا میں ہی مسجد کی تعمیر کے لیے 5 ایکڑ زمین فراہم کی جائے.فیصلہ آنے سے سے قبل ایودھیا اور پورے ملک میں سکیورٹی سخت کر دی گئی ایودھیا میں متنازع مقام سمیت اہم عبادت گاہوں کی حفاظت کے لیے سکیورٹی بڑھا دی گئی ہے کئی مقامات پر انسداد دہشت گردی دستے تعینات کر دیے گئے ہیں. ایودھیا میں دفعہ 144 کے تحت حکم امتناعی نافذ کیا گیا ہے ضلع انتظامیہ نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ سوشل میڈیا پر اشتعال انگیز پیغامات سے دور رہیں. سپریم کورٹ نے اس کیس کی سماعت 16 اکتوبر 2019 کو مکمل کر لی تھی مغل بادشاہ ظہیرالدین محمد بابر کے نام سے منسوب بابری مسجد ایودھیا میں 1528 میں ایک مقامی فوج کے کمانڈر نے بنوائی تھی. بہت سے ہندوﺅں اور ہندو مذہبی رہنماﺅں کا دعویٰ ہے کہ کہ بابر نے یہ مسجد ایودھیا میں ان کے بھگوان رام کے پہلے سے قائم ایک مندر کو توڑ کر اس کی جگہ تعمیر کروائی تھی ان کا ماننا ہے کہ بابری مسجد کے مقام پر ہی بھگوان رام کی پیدائش ہوئی تھی اور اس لیے مسجد کی زمین کی ملکیت مندر کی ہے۔

تاریخ اشاعت : ہفتہ 9 نومبر 2019

Share On Whatsapp