After The Pakistanis, Mickey Arthur Iftikhar Ahmed's 'madness', Said A Wonderful Thing
Iftikhar Ahmed Could Be The Player Pakistan Is Looking For: Former Coach

پاکستانیوں کے بعد مکی آرتھر افتخار احمد کے ’دیوانے‘ ہو گئے، شاندار بات کہہ دی

افتخار احمد وہ کھلاڑی ثابت ہو سکتا ہے جس کی پاکستان کو تلاش ہے :سابق کوچ

کینبرا : پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق ہیڈ کوچ کی آرتھر بھی آسٹریلیا کیخلاف دوسرے ٹی 20 میچ میں دھواں دار بلے بازی کر کے پاکستانیوں کے دل جیتنے والے افتخار احمد کے مداح بن گئے ہیں۔تفصیلات کے مطابق مکی آرتھر کا کہنا ہے کہ افتخار احمد پاکستان کیلئے سب سے مثبت کھلاڑی ثابت ہوئے۔ پاکستان بہت عرصے سے ایسے پاور ہٹرز کی تلاش میں ہے جو میچ ختم کرنے کی صلاحیت رکھتے ہوں۔
اگر افتخار احمد نے اپنی کارکردگی برقرار رکھی تو یہ وہی کھلاڑی بن سکتے ہیں۔ انہوں نے بہترین پل شاٹس کھیلیں اور شاندار چھکے بھی مارے۔واضح رہے کہ مکی آرتھر نے یہ بھی کہا کہ اگر وہ قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ ہوتے تو آسٹریلیا کیخلاف دوسرے ٹی 20 میچ میں محمد عرفان کی جگہ محمد حسنین کو ٹیم میں شامل کرتا کیونکہ آسٹریلیا کے خلاف ایسے بالرز کی ضرورت ہوتی ہے جو خاص طور پر دائیں ہاتھ کے بلے بازوں کو اندر کی جانب سوئنگ ہونے والی گیندیں کروائیں اور انہیں کھل کر شاٹس کھیلنے کا موقع نہ ملے۔
مکی آرتھر نے دعویٰ کیا کہ بابراعظم بہت ٹھہر کر اور توقف کے ساتھ گیند کو کھیلتے ہیں ان کا کانٹیکٹ پوائنٹ انکی آنکھوں کے نیچے ہوتا ہے جس سے انہیں آف سائیڈ پر نظر رکھنے میں مدد ملتی ہے اور وہ گیند کو اسی سمت میں کھیلتے ہیں جہاں وہ گیند کو بھیجنا چاہتے ہیں اسی لئے انکے شاٹس اتنے مکمل اور بھرپور ہوتے ہیں جبکہ پاکستانی ٹیم کے دیگر بلے باز پریشان کن انداز میں گیند کو کھیلتے ہیں جس سے انکے بلے اور طاقت کا توازن قائم نہیں رہتا جس کے نتیجے میں بلے باز کھیلتا کہیں اور ہے اور گیند جاتی کہیں اور ہے۔
انہوں نے کہا کہ گیند کو ٹھہر کر اور توقف کیساتھ شاٹ مارنے کی صلاحیت ہی بابراعظم کی عمدہ اور دیگر بلے بازوں کی ناقص کارکردگی کی وجہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ بابراعظم گیند کو توقف کیساتھ اور بہترین انداز میں کھیل رہے تھے اور آسٹریلیا میں کامیابی کیلئے یہ سب سے زیادہ ضروری ہے۔

تاریخ اشاعت : جمعرات 7 نومبر 2019

Share On Whatsapp