Kumitaiso – Japan’s Controversial Human Pyramids

کومیتائیسو ۔ جاپان کے متنازعہ انسانی اہرام

جاپانی جمناسٹک میں ایک فارمیشن کافی متنازعہ ہوگئی ہے۔ کومیتائیسو    نامی اس  فارمیشن میں طلباء ایک دوسرے پر چڑھ کر انسانی اہرام بناتے ہیں لیکن اس میں سکولوں کے بہت سے طلباء شدید زخمی بھی ہوتے ہیں۔

کومیتائیسو    کا بنیادی مقصد بظاہر یہی معلوم ہوتا ہے کہ جاپان بھر کے سکولوں میں طلباء میں ایک ساتھ مل کر  اور ثابت قدمی سے کام کرنے کا جذبہ پیدا ہو۔

تاہم اس میں مشکل اس وقت پیش آئی جب سکولوں کی انسانی اہرام بنانے کی تقریب میں   یہ اہرام مزید اونچے  ہونے لگے۔ اونچے اہراموں کی وجہ سے سب سے نیچے موجود طلباء کے لیے  اس کا بوجھ برداشت کرنا بھی مشکل ہوتا گیا۔اس  سے ہر سال ہی سینکڑوں طلباء زخمی ہونے لگے۔ اس کے باوجود کئی سکولوں نے یہ مشق جاری رکھی ہوئی ہے۔

2015 میں اوساکا سے تعلق رکھنے والے  ایک  جونیئر  ہائی سکول کے طالب علم کی گردن کی ہڈی ٹوٹ گئی تھی۔

یہ طالب علم 157 لڑکوں کے ساتھ مل کر 10 منزلہ کومیتائیسو اہرام  بنا رہا تھا۔یہ صرف ایک کیس نہیں۔ اس سال جنوری سے اگست تک صرف کوبے شہر میں  کومیتائیسو کی وجہ سے زخمی ہونے کے 51 کیس رپورٹ ہو چکے ہیں۔پچھلے تین سالوں میں زخمی ہونے والے کیسوں کی تعداد 123 ہے۔

2016 میں شائع ہونے والے اے ایف پی کے ایک مضمون کے مطابق کومیتائیسو سے زخمی ہونے والے  طلباء کی تعداد سالانہ 8 ہزار سے زیادہ ہے، جو واقعی تشویشناک ہے۔

جاپان بھر میں ڈاکٹر اور والدین  کومیتائیسو پر پابندی کے لیےمہم چلا رہےہیں لیکن  اساتذہ کا خیال ہے کہ یہ فارمیشن طلباء کو ایک ساتھ  اور ثابت قدمی سے کام کرنے    کا اہم سبق دیتی ہے۔

کومیتائیسو پر پابندی لگائی جائے یا نہیں، اس حوالے سے جاپان بھر میں  بحث جاری ہے۔

تاریخ اشاعت : بدھ 30 اکتوبر 2019

Share On Whatsapp
سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں