وزیراعظم کی ثالثی کی کوششوں نے کام کر دکھایا، ایران کے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کیساتھ تعلقات میں بہتری کیلئے برسوں بعد سب سے بڑی پیش رفت

سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کیساتھ تعلقات میں تبدیلی آئی ہے، ایرانی صدر حسن روحانی نے تصدیق کر دی

تہران : وزیراعظم کی ثالثی کی کوششوں نے کام کر دکھایا، ایران کے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کیساتھ تعلقات میں بہتری کیلئے برسوں بعد سب سے بڑی پیش رفت، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کیساتھ تعلقات میں تبدیلی آئی ہے، ایرانی صدر حسن روحانی نے تصدیق کر دی۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان کی طرف سعودی عرب اور ایران کے درمیان ثالثی کے مثبت نتائج سامنے آنے لگے ہیں۔
ایرانی میڈیا کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے تہران کیساتھ رویہ میں کافی بہتری دیکھنے میں آئی ہے۔ ایرانی میڈیا کو دعویٰ ہے کہ صدر حسن روحانی نے بھی تصدیق کی ہے کہ کچھ روز کے دوران دونوں خلیجی اتحادی ممالک نے تہران کیساتھ اپنے رویے میں نرمی لائی ہے۔ اس حوالے سے ایرانی صدر حسن روحانی نے متحدہ عرب امارات کے مشیر قومی سلامتی کے دورہ ایران کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ بات درست ہے کہ چند ماہ میں متحدہ عرب امارات کے ساتھ کچھ رابطے ہوئے ہیں۔
کچھ اماراتی اہلکاروں نے ایران کا دورہ کیا جبکہ کچھ ایرانی اہلکار امارات بھی گئے۔ ایرانی صدر کا کہنا ہے کہ پاکستان کے قابل احترام وزیراعظم عمران خان کے ایران کے دورے کا مقصد ہمیں خطے کے مسائل مل کر حل کرنے سے متعلق آمادہ کرنا تھا۔ایرانی صدر کہتے ہیں کہ اہم بات یہ ہے کہ ہمارے خیال میں عمران خان نے یمن مسئلے کے حل کے لیے بھی کوشش کی جو ایک ایسا مسئلہ ہے جو خطے کے امور اور ایران اور سعودی عرب کے تنازعات کے حل سے جڑا ہے۔
اگر وہاں جنگ بندی ہوتی ہے اور جنگ بندی کا اعلان ہو جاتا ہے تو خط میں اہم مسئلہ حل ہو جائے گا یہی سبب تہران اور ریاض کے درمیان تعلقات کی بہتری کا باعث بنے گا۔ واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے امریکا کے دورے سے واپسی کے بعد ایران اور سعودی عرب کے مختصر دورے کیے تھے اور دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی کو کم کروانے کی کوشش کی۔

تاریخ اشاعت : ہفتہ 19 اکتوبر 2019

Share On Whatsapp