لاہور میں بڑھتے ہوئے ٹریفک مسائل، پنجاب حکومت کا شہر کیلئے 350 نئی بسیں خریدنے کا فیصلہ

جدید سہولیات سے آراستہ پبلک ٹرانسپورٹ بسیں ایشیائی ترقیاتی بینک کے تعاون سے خریدی جائیں گی، منصوبے کا آغاز اگلے برس کے ابتداء میں ہونے کا امکان

لاہور : لاہور میں بڑھتے ہوئے ٹریفک مسائل، پنجاب حکومت کا شہر کیلئے 350 نئی بسیں خریدنے کا فیصلہ، جدید سہولیات سے آراستہ پبلک ٹرانسپورٹ بسیں ایشیائی ترقیاتی بینک کے تعاون سے خریدی جائیں گی، منصوبے کا آغاز اگلے برس کے ابتداء میں ہونے کا امکان۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب حکومت نے لاہور میں پبلک ٹرانسپورٹ سے متعلق درپیش مسائل کے حل کے لئے شہر میں 350 نئی بسیں چلانے کا فیصلہ کیا ہے۔
بتایا گیا ہے کہ پنجاب حکومت نئی بسیں ایشین ڈویلپمنٹ بنک سے قرضہ لے کر خریدے گی جبکہ ایشین ڈویلپمنٹ بنک مشن نے پنجاب حکومت کی حصول قرضہ کی درخواست کی منظوری کرتے ہوئے 31 دسمبر تک حکومت سے بسوں کی خریداری کا پلان طلب کرلیا ہے جبکہ اس مد میں بنک پنجاب حکومت کو قرض دینے پر تیار ہوگیا ہے۔ دوسری جانب پنجاب حکومت کا اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبہ رواں ماہ میں مکمل کر لینے کا اعلان، سی پیک میں شامل منصوبے کا صرف 2 فیصد کام باقی، رواں ماہ کے آخر تک مکمل کرنے کے بعد ٹرین کو آپریشنل کر دیا جائے گا۔
منصوبے کیلئے سبسڈی کا تعین کرنے کے بعد اسے آپریشنل کر دیا جائے گا۔ اس سے قبل وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار نے بھی اعلان کیا تھا کہ لاہور اورنج لائن میٹرو منصوبہ جلد مکمل کر لیا جائے گا۔ نجی ٹی وی چینل کے شو کو دیے گئے خصوصی انٹریو میں وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار نے کہا تھا کہ اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے پر تیزی سے کام جاری ہے اور ہر صورت اس منصوبے کو رواں برس کے آخر تک مکمل کر لیا جائے گا۔
اس سے قبل گزشتہ ماہ سپریم کورٹ نے بھی اورنج لائن منصوبہ جلد سے جل مکمل کرنے کی ہدایت کی تھی۔ گزشتہ ماہ ہونے والی سماعت کے دوران سیکرٹری ٹرانسپورٹ نے بتایا تھا کہ منصوبے پراب تک 169 بلین روپے خرچ ہوچکے ہیں اورمزید اخراجات بھی ہوں گے۔ سماعت کے دوران پراجیکٹ ڈائریکٹرنے استدعا کی کہ میٹرو ٹرین منصوبے کی تکمیل کیلئے جنوری 2020ء تک مہلت دی جائے جس میں آزمائشی ٹرین چلانے سمیت دیگر تکنیکی امور کی جانچ پڑتال کی جائے گی۔
درخواست پر عدالت نے 2020ء تک مہلت دینے کی استدعا منظور کرتے ہوئے ہدایت کی کہ منصوبہ مقررہ وقت میں مکمل کیا جائے۔ واضح رہے کہ یہ منصوبہ مسلم لیگ ن کی پچھلی حکومت نے شروع کیا تھا جو اکتوبر 2018 ء میں مکمل ہونا تھا۔ لیکن مقررہ مدت سے ایک سال کا عرصہ گزرنے کے باوجود کام مکمل نہیں ہوسکا۔

تاریخ اشاعت : جمعہ 11 اکتوبر 2019

Share On Whatsapp