فارما کمپنیوں کی جانب سے شوگر ، بلڈ پریشر اور معدے کے امراض کی ادویات کی قیمتوں میں اضافہ کے خلاف پنجاب اسمبلی میں قر ارداد جمع

لاہور : ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی کی آشیر باد سے فارما کمپنیوں کی طرف سے شوگر ، بلڈ پریشر اور معدے کے امراض کی ادویات کی قیمتوں میں ازخود اضافہ کے خلاف پنجاب اسمبلی میں قر ارداد جمع کروادی گئی ۔ مسلم لیگ (ن) کی رکن اسمبلی حناپرویزبٹ کی جانب سے جمع کروائی گئی قرار داد کے متن میں کہاگیا کہ ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی کی آشیر باد سے فارما کمپنیوں کی طرف سے رواں سال جنوری سے لے کر اب تک شوگر ، بلڈ پریشر اور معدے کے امراض کی ادویات کی قیمتوں میں ازخود اضافہ کر دیا اور ادویات ساز کمپنیوں نے نئی قیمتوں کی فہرست جا ری کردی ہے ۔
شوگر کی دوا کی قیمت میں 30 روپے ، بلڈپریشر کی دوا کی قمیت میں 12 روپے جبکہ السر ، شوگر اور بلڈ پریشر کی دوائیوں میں مجموعی طور پر 40 فیصد اضافہ کر دیا ہے۔فارما سیوٹیکل کمپنیوں کا کہناہے کہ ڈرگ پرائسنگ پالیسی کے تحت سالانہ افراط رز کی شرح کے مطابق 50 سے 70 فیصد ازخود اضافہ کرسکتے ہیں جبکہ پاکستان میں 87 فی صد لوگ شوگر ، بلڈ پریشر ، السر اور معدے جیسی خطرناک بیماریوں میں مبتلا ہیں یہ وہ بیماریا ں ہیں جن کی دوائی کا وقفہ نہیں ڈالا جاسکتا ان کو ہر صورت استعمال کرنے پڑتی ہیں ،ان ادویا ت کی قیمتوں کے بڑھنے سے غریب مریض جوکہ مہنگائی سے پہلے ہی پریشان ہے اوپر سے حکومت کی طرف سے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کے باعث ان مریضوں میں شدید پریشانی پائی جاتی ہے اور تندرست ہونے کی بجائے مزید بیمار ہوگئے ہیں وہ بیماریا ں ہیں جو پریشانی میں جان لیوا ثابت ہوتی ہیں لہذا پنجاب اسمبلی کا یہ ایوان حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ حکومت عوام کو ریلیف فراہم کرتے ہوئے ان جان لیوا بیماریوں میں شوگر ، بلڈ پریشر ، السر اور معدے میں مبتلا افراد کیلئے فی الفور ادویا ت کی قیمتوں کو بڑھانے کی بجائے جوپہلے قیمتیں تھیں ان کو بھی کم کیاجانا بھی ضرورت ہے ۔

تاریخ اشاعت : بدھ 9 اکتوبر 2019

Share On Whatsapp