تعمیرات کے شعبے کے فروغ کے لئے ضروری ہے کہ اسے باقاعدہ صنعت کا درجہ دیا جائے،

لینڈ کورٹس کے قیام سے اراضی سے متعلقہ مسائل کو جلد حل کرنے میں خاطر خواہ مدد ملے گی , وزیراعظم عمران خان کا تعمیرات کے شعبے میں کاروبار کیلئے آسانیاں پیدا کرنے کے حوالے سے اجلاس سے خطاب

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ تعمیرات کے شعبے کے فروغ کے لئے ضروری ہے کہ اسے باقاعدہ صنعت کا درجہ دیا جائے تاکہ شعبے سے منسلک افراد کے لئے آسانیاں پیدا کی جا سکیں، لینڈ کورٹس کے قیام سے اراضی سے متعلقہ مسائل کو جلد حل کرنے میں خاطر خواہ مدد ملے گی۔ انہوں نے یہ بات جمعرات کو تعمیرات کے شعبے میں کاروبار کے لئے آسانیاں پیدا کرنے کے حوالے سے اقدامات کے بارے میں اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔
اجلاس میں معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ سید زبیر گیلانی، سیکرٹری ہاؤسنگ ڈاکٹر عمران زیب، چیئرمین نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی لیفٹیننٹ جنرل (ر) انور علی حیدر و دیگر سینئر افسران نے شرکت کی۔ چیئرمین نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی لیفٹیننٹ جنرل (ر) انور علی حیدر نے وزیرِاعظم کو تعمیرات کے شعبے میں حائل مشکلات اور ان کے حل کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ تعمیرات کے حوالے سے تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے پالیسی، قوانین اور قواعد کو آسان بنایا جارہا ہے۔
تعمیرات سے متعلقہ معلومات کی آن لائن فراہمی کے لئے ویب پورٹل کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے، تعمیرات کے لئے مختلف محکموں کی جانب سے مطلوبہ اجازت ناموں کے حصول کے نظام کو سہل بنایا جا رہا ہے اور کوشش کی جا رہی ہے کہ اجازت ناموں اور این او سی کی جگہ رائج قوانین سے مطابقت کے نظام کو رائج کیا جائے۔ انہوں نے بتایا کہ شہری علاقوں میں زوننگ اور تعمیرات کے ذیلی قوانین پر خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔
اس کے ساتھ ساتھ انفارمیشن ٹیکنالوجی کو متعارف کرایا جا رہا ہے تاکہ جہاں پورے نظام میں شفافیت کو یقینی بنایا جاسکے وہاں تمام مراحل کو سہل اور تیز کیا جاسکے اور متعلقہ اداروں میں معلومات کی ترسیل کو آسان بنایا جائے۔ چیئرمین ہاؤسنگ اتھارٹی نے بتایا کہ نئے نظام میں شخصی رابطوں اور شخصی موجودگی کی شرائط کو حتی المقدور کم سے کم کرنے کے ساتھ ساتھ صوابدیدی اختیارات ختم کرنے پر خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔
چیئرمین نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی نے اس ضمن میں قلیل، درمیانی اور طویل المدتی روڈ میپ بھی پیش کیا۔ انہوں نے کہا کہ پہلے مرحلے میں صوبوں کے مختلف اداروں کے درمیان اراضی سے متعلقہ معاملات میں رابطہ، معلومات کی فوری ترسیل اور متعلقہ محکمے کی جانب سے مطلوبہ کارروائی کو ایک مقررہ مدت میں سر انجام دینے کو یقینی بنانے کے لئے آن لائن حل فراہم کیا جا رہا ہے، اس کے ساتھ ساتھ اراضی سے متعلقہ تصفیوں کے جلد حل کے لئے سہل نظام رائج کرنے پر خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔
انہوں نے بتایا کہ پہلے مرحلے میں بڑے شہروں اور سرکاری اراضی کا تمام ریکارڈ ڈیجیٹل کیا جائے گا۔ لانگ ٹرم پلان میں ملک بھر میں واقع اراضی کا ریکارڈ ڈیجیٹل کیا جائے گا۔ چیئرمین نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی نے بتایا کہ ماضی میں اراضی ریکارڈ کمپیوٹرائزڈ کیے جانے کی کوشش کی گئی جس کو بڑی حد تک مکمل بھی کیا گیا تاہم ڈیجیٹلائزیشن کے عمل سے نہ صرف تمام ریکارڈ آن لائن میسر آئے گا بلکہ اس عمل سے اراضی سے متعلقہ بیشتر مسائل بھی حل ہو جائیں گے۔
چیئرمین سی ڈی اے کی جانب سے وزیرِ اعظم کو اسلام آباد میں ’’آٹو میٹڈ کلائنٹ سروس سنٹرز‘‘ شروع کئے جانے کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ۔ سی ڈی اے سے متعلقہ معاملات میں اس نظام کو متعارف کرانے سے جہاں شہریوں آسانیاں میسر آئیں گی وہاں بدعنوانی، رشوت و دیگر مسائل پر قابوپانے میں بھی مدد ملے گی۔ اجلاس میں رجسٹر مال گزاری اور مساوی کی جیو ریفرنسنگ کرنے اور سیٹلائٹ تصاویر کے ذریعے اراضی ریکارڈ مرتب کرنے کے حوالے سے لائحہ عمل پر بھی تفصیلی بریفنگ دی گئی۔
وزیرِ اعظم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کاروباری برادری کے لئے آسانیاں پیدا کرنا حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا کہ تعمیرات کے شعبے کے فروغ کے لئے ضروری ہے کہ اسے باقاعدہ صنعت کا درجہ دیا جائے تاکہ شعبے سے منسلک افراد کے لئے آسانیاں پیدا کی جا سکیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت تعمیرات سے متعلقہ قوانین کو آسان بنانے اور غیر ضروری اجازت ناموں اور این او سیز کی شرائط کو کم سے کم کرنے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے۔
وزیرِ اعظم نے کہا کہ بڑے شہروں میں کثیر المنزلہ عمارات کی تعمیر کے حوالے سے حکومت پہلے ہی سول ایویشن و دیگر متعلقہ اداروں سے اجازت نامہ حاصل کرنے کی شرط کو ختم کرچکی ہے تاکہ مخصوص علاقوں کے علاقہ تمام دیگر علاقوں میں بغیر کسی رکاوٹ کثیر المنزلہ رہائشی اور کاروباری عمارات تعمیر کی جا سکیں۔ انہوں نے کہا کہ لینڈ کورٹس کے قیام سے اراضی سے متعلقہ مسائل کو جلد حل کرنے میں خاطر خواہ مدد ملے گی۔

تاریخ اشاعت : جمعرات 12 ستمبر 2019

Share On Whatsapp