اماراتی نوجوانوں نے کم سن لڑکے کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا

ملزمان مظلوم لڑکے سے جنسی عمل کے دوران اُس کی ویڈیو بھی بناتے رہے

دُبئی : دُبئی پولیس نے 5 اماراتی نوجوانوں کو ایک اماراتی لڑکے سے جنسی زیادتی کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔ کم سن لڑکے کو ایک ملزم کے گھر پر زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔ پانچوں ملزمان کی عمریں 19 سے 25 سال کے درمیان بتائی جاتی ہیں۔ مظلوم لڑکے نے استغاثہ کو بتایا ”میری ایک 20 سالہ لڑکے سے سنیپ چیٹ پر ملاقات ہوئی۔ جس نے مجھے کہیں پر ملاقات کرنے کو کہا۔
یہ لڑکا میرے گھر کے قریب اپنی گاڑی پر آیا جس کے ساتھ ایک اور نوجوان بھی بیٹھا تھا۔ دونوں نوجوان مجھے ایک وِلا میں لے گئے۔ جہاں ان کے باقی دوست بھی موجود تھے۔ یہاں پر ان لوگوں نے مجھے چاقو سے ڈرا کر باری باری زیادتی کا نشانہ بنایا۔ اگر میں ان کی بات ماننے سے انکار کرتا تو یہ مجھے کہتے کہ اگر بات نہ مانی تو مزید لوگ بُلا کر تم سے جنسی زیادتی کروائیں گے۔
اس دوران یہ لوگ میری ویڈیو بھی بناتے رہے۔ انہوں نے مجھے دو گھنٹے بعد گھر پر اُتار دِیا۔ میں بہت ڈرا ہوا تھا اس لیے کسی کو کچھ نہ بتایا۔ مگرکچھ روز بعد میرے ایک کلاس فیلو نے مجھے بتایا کہ اُس نے ایک ویڈیو دیکھی ہے جس میں کچھ لوگ میرے ساتھ جنسی عمل میں مصروف ہیں۔ میں یہ سُن کر اور پریشان ہو گیا۔ رات کو میرے اس کلاس فیلو نے میرے بڑے بھائی کو اس بارے میں بتایا ۔
جس کے بعد میرے والدین کو بھی ساری بات پتا چل گئی۔ جنہوں نے مجھے القصیص پولیس اسٹیشن لے جا کر ملزمان کے خلاف جنسی زیادتی اور ویڈیو بنانے کا پرچہ درج کروا دیا۔ جس کے بعد تمام ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا۔ جنہوں نے اپنے گھناؤنے جُرم کا اعتراف کر لیا۔ تین ملزمان ایسے بھی تھے جن کے خلاف پہلے بھی لڑکوں کے ساتھ جنسی زیادتی کا کریمنل ریکارڈ موجود تھا۔ اس مقدمے کی اگلی سماعت 4 اگست 2019ء کو ہو گی۔

تاریخ اشاعت : جمعہ 26 جولائی 2019

Share On Whatsapp