Stokes Nominated For New Zealander Of The Year

ورلڈ کپ فائنل میں کیویزکا دل توڑنےوالے بین سٹوکس نیوزی لینڈر آف دی ایئر ایوارڈ کےلئے نامزد

سٹوکس کرائسٹ چرچ میں پیدا ہوئے،والدین اب بھی نیوزی لینڈ میں رہائش پذیر

کرائسٹ چرچ : ورلڈ کپ فائنل میں نیوزی لینڈ کی عوام کے دل توڑنے والے برطانوی آل راﺅنڈر بین سٹوکس کو نیوزی لینڈر آف دی ایئر ایوارڈ کے لیے نامزد کردیا گیا ہے ۔ بین سٹوکس نیوزی لینڈ میں ہی پیدا ہوئے تھے تاہم12سال کی عمر میں اس وقت انگلینڈ آگئے جب نیوزی لینڈ کے لیے رگبی لیگ کھیلنے والے ان کے والد جیرڈ سٹوکس انگلینڈ میں کوچنگ کررہے تھے،ان کے والدین اب نیوزی لینڈ واپس جاچکے ہیں اور جنوبی جزیرے کے شہر کرائسٹ چرچ میں رہائش پذیر ہیں۔
بین سٹوکس کو نیوزی لینڈ ٹیم کے کپتان کین ولیمسن کے ساتھ اس ایوارڈ کے لیے نامز د کیا گیا ہے، ولیمسن کو ورلڈ کپ میں پلیئر آف دی ٹورنامنٹ کا بھی ایوارڈ ملا تھا۔نیوزی لینڈر آف دی ایئر کے چیف جج کیمرو ن بینٹ کا کہنا تھا کہ حالانکہ سٹوکس اب نیوزی لینڈ کے لیے نہیں کھیلتے تاہم وہ کرائسٹ چرچ میں پیدا ہوئے اور ان کے والدین بھی اب یہیں رہائش پذیر ہیںاور اپنے ماﺅری خون کی بدولت اب بھی ہمارے لوگ اسے اپنا ہی سمجھتے ہیں ۔
بین سٹوکس نے ورلڈ کپ فائنل میں84رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیل کر نیوزی لینڈ کے خلاف میچ ٹائی کرنے میں بنیادی کردار ادا کیا تھا جس کے بعد سپر اوور میں دونوں ٹیموں نے 15،15رنز سکور کیے اور انگلینڈ کی ٹیم زیادہ باﺅنڈریاں لگانے کے باعث ورلڈ چیمپئن بن گئی ۔ 

تاریخ اشاعت : جمعہ 19 جولائی 2019

Share On Whatsapp