نواز شریف نے لندن فلیٹس 2006 نہیں بلکہ 1993 میں حاصل کیے

سابق وزیر دفاع اور سینئر ن لیگی رہنما خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے شریف خاندان کے دعوت کو جھوٹ ثابت کر دیا

اسلام آباد : نواز شریف نے لندن فلیٹس 2006 نہیں بلکہ 1993 میں حاصل کیے، سابق وزیر دفاع اور سینئر ن لیگی رہنما خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے شریف خاندان کے دعوت کو جھوٹ ثابت کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق پانامہ لیکس کے بعد سے شریف خاندان دعویٰ کرتا آیا ہے کہ لندن کے مشہور فلیٹس ان کی جانب سے 1993 نہیں بلکہ 2006 میں حاصل کیے گئے تھے۔
شریف خاندان پر الزام ہے کہ نواز شریف نے بطور وزیراعظم اپنے پہلے دور اقتدار میں منی لانڈرنگ کے ذریعے پیسہ برطانیہ منتقل کیا اور اس پیسے سے لندن کے اربوں روپے مالیت کے فلیٹس خریدے گئے۔ تاہم شریف خاندان اس الزام کی تردید کرتے ہوئے دعویٰ کرتا آیا ہے کہ لندن فلیٹس 2006 میں اس وقت خریدے گئے جب ن لیگ اقتدار میں نہیں تھی۔ تاہم اب اس حوالے سے ن لیگ کے سینئر رہنما اور سابق وزیر دفاع خواجہ آصف کے بیان نے شریف خاندان کے دعوے کو جھوٹ ثابت کر دیا ہے۔
خواجہ آصف کی جانب سے منگل کے روز قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے اعتراف کیا گیا ہے کہ لندن کے مشہور زمانہ فلیٹس نواز شریف نے 1993 میں ہی حاصل کیے تھے۔ خواجہ آصف کے اس بیان کو اعتراف قرار دیتے ہوئے بحث کی جا رہی ہے کہ لیگی رہنما نے خود اپنی قیادت کو مجرم اور جھوٹا ثابت کر دیا ہے۔ شریف خاندان ہمیشہ سے دعویٰ کرتا تھا کہ لندن فلیٹس 2006 میں حاصل کیے گئے، جبکہ اب خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ نواز شریف نے لندن فلیٹس 1993 میں حاصل کیے۔
یوں خواجہ آصف خود نواز شریف کے مجرم ہونے کی گواہی دے رہے ہیں۔ اس تمام صورتحال میں عدالت سے مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ خواجہ آصف کے اس تازہ ترین اعتراف کو سنجیدگی سے لے کر معاملے کی مزید تحقیقات کروائی جائیں، اور شریف خاندان کیخلاف سخت سے سخت کاروائی عمل میں لائی جائے۔

تاریخ اشاعت : منگل 16 جولائی 2019

Share On Whatsapp