ٹیکس چوری کرنے والوں کو ٹیکس نیٹ میں لانا ہوگا

اگر عوام ٹیکس نہیں دیں گے تو حکومت کے لیے مشکلات بڑھیں گی،رضا باقر

لاہور ۔ :   گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر کا کہنا ہے کہ پاکستان کو معاشی چیلنجز کا سامنا ہے لیکن صورتحال بہتر ہورہی ہے اور ایک سال بعد حالات میں نمایاں بہتری آئے گی۔اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے رضا باقر نے کہا کہ پاکستان کی معیشت کو 2 چیلنجز درپیش ہیں، کرنٹ اکائونٹ خسارہ تاریخی بلند سطح یعنی ماہانہ 2 ارب ڈالر تک پہنچ گیا تھا، کچھ سال قبل ماہانہ کرنٹ اکائونٹ خسارہ زیرو تھا، دوسرا بڑا چیلنج مالیاتی خسارہ ہے، قرضوں اور بجٹ خسارے میں نمایاں اضافہ ہوا، ان دونوں مسائل کو حل کیا جارہا ہے۔
گورنر اسٹیٹ بینک کا کہنا تھا کہ کرنٹ اکائونٹ خسارہ کم ہوکرماہانہ ایک ارب ڈالر پر آگیا ہے، نئے بجٹ میں مالیاتی خسارے میں کمی کیلئے اقدامات کیے گئے، وزیراعظم نے کفایت شعاری کی پالیسی اختیار کی، ہمیں مستقبل کیلئے پرامید رہنا چاہیے، صورتحال میں بہتری آئی ہے۔رضا باقر نے مزید کہا کہ ہمیں برآمد کنندگان کی حوصلہ افزائی کرنی ہے، ایکسچینج ریٹ سے برآمد کنندگان کو فائدہ ہوا تاہم یہ مستقل حل نہیں، جو لوگ ٹیکس نیٹ سے باہر ہیں ان سے مدد کی ضرورت ہے، ٹیکس چوری کرنے والوں کو ٹیکس نیٹ میں لانا ہوگا، پاکستان کی معاشی آئوٹ لک مثبت ہے، ہماری سمت درست ہے، منصفانہ ٹیکس سسٹم پر کام ہورہا ہے، ہمیں مل کر سخت محنت کرنی ہے۔
اگر عوام ٹیکس نہیں دیں گے تو حالات دگرگوں ہوتے چلے جائیں گے اس لیے عوام حکومت کا ساتھ دے اور ٹیکس چوری کرنے کے بجائے ایمانداری سے ٹیکس جمع کرائے تاکہ حکومت اس مشکل وقت سے نکل سکے۔اگر عوام نے تعاون نہ کیا تو اسی طرح قرضے پر معاملات چلیں گے اور پاکستانی معیشت جلدی بہتر نہیں ہو سکے گی۔

تاریخ اشاعت : جمعہ 12 جولائی 2019

Share On Whatsapp