نواز شریف کے لیے گھر سے کھانا لانے پر پابندی کے بعد انہوں نے مریم نواز کو سخت ہدایات جاری کر دیں

سابق وزیراعظم نے صاحبزادی کو اپنے کھانے کے حوالے سے احتجاج کرنے سے منع کر دیا

لاہور : سابق وزیراعظم کی نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز نے کہا ہے ان کے والد نے انہیں اپنے کھانے سے متعلق احتجاج کرنے سے سختی سے منع کیا ہے ۔ مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف جیل میں عام قیدیوں کو ملنے والا کھانا کھا رہے ہے۔انہوں نے کہا کہ انہیں نواز شریف نے بتا یا ہے کہ آج انہیںآ لو اور پتلے سے شوربے کے ساتھ بڑی سی روٹی کھانے کے لیے دی گئی ۔
مریم نواز نے بتایا کہ سابق وزیراعظم نے کہا کہ باقی قیدی بھی یہ کھاتے ہیں مجھے بھی اس کھانے پر کوئی اعتراض نہیں ہے اور اب آپ نے بھی اس پر کوئی بات نہیں کرنی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی صحت سے متعلق موجودہ حکومت پر اعتماد نہیں ہے۔نجی ٹی وی چینل کے پروگرام کے دوران انہوں نے کہا کہ انہیں نواز شریف کی صحت سے متعلق موجودہ حکومت پر بالکل اعتماد نہیں ہے اور حکومت انہیں نواز شریف سے ملاقات کی اجازت اجازت بھی نہیں دے رہی ہے۔
انہوں نے مزید بتایا کہ نواز شریف کی طبیعت کچھ عرصہ سے خراب ہے لیکن وہ اپنی صحت سے متعلق بات کرنے سے منع کرتے ہیں۔ مریم نواز نے کہا کہ پنجاب حکومت کی جانب سے نواز شریف کے لیے گھر کا کھانا بھی بند کر دیا گیا اور جیل کا کھانا دیا جا رہا ہے۔مریم نواز نے کہا کہ ہمارے خلاف رکاوٹیں کھڑی کی جا رہی ہیں کبھی جلسہ گاہ میں پانی چھوڑا جا رہا ہے اور کبھی دیگر رکاوٹیں کھڑی کی جا رہی ہیں۔
خیال رہے کہ مریم نواز ایک نجی ٹی وی کے شو میں انٹر ویو دے رہی تھیں جب انہوں نے یہ تمام باتیں کیں البتہ ان کا انٹرویو درمیان میں ہی نشر ہونے سے روک دیا گیا۔ انٹر ویو کرنے والے اینکر ندیم ملک کے مطابق یہ انٹرویو زبردستی روکا گیا۔مریم نوا زکا یہ انٹر ویو صرف 10سے11منٹ نشر ہوا جس دوران انہوں نے جج ارشد ملک کے ویڈیو سکینڈل کے حوالے سے بھی بات کی اور انکشاف کیا کہ انکے پاس جج کی اور ویڈیو بھی موجود ہے۔

تاریخ اشاعت : جمعرات 11 جولائی 2019

Share On Whatsapp