پنجاب کا2200ارب روپے کا بجٹ کل پیش کیا جائے گا

ترقیاتی اخراجات کی مد میں 350 ارب رکھے جانے کی تجویز دی گئی ہے

لاہور : مالی سال 20-2019کیلئے صوبہ پنجاب کا بجٹ کل اسمبلی میں پیش کیا جائے گا،بجٹ کا مجموعی حجم کا تخمینہ تقریبا 2200 ارب روپے لگایا گیا ہے. صوبائی وزیر خزانہ مخدوم ہاشم جواں بخت صوبے کا مالی سال 20-2019کیلئے بجٹ پنجاب اسمبلی میں پیش کریں گے‘بجٹ کا مجموعی حجم کا تخمینہ تقریبا 2200 ارب روپے لگایا گیا ہے، ترقیاتی بجٹ کی مد میں تقریبا 350 ارب رکھے جانے کی تجویز دی گئی ہے.
بجٹ دستاویزات کے مطابق صوبائی ترقیاتی بجٹ میں تعلیم کیلئے 50 فیصد اضافے کے ساتھ 49 ارب سے زائد جبکہ صحت کیلئے 40 فیصد اضافے کے ساتھ 46 ارب سے زائد مختص کئے جانے کی تجویز دی گئی ہے. این ایف سی کے تحت پنجاب کو 1494 ارب روپے ملیں گے جبکہ صوبائی آمدنی کا حجم 368 ارب روپے لگایا گیا ہے‘بجٹ میں قابل ٹیکس آمدنی کا حجم 36 فیصد اضافے کے ساتھ 283 ارب روپے جبکہ غیر محاصل آمدنی کا تخمینہ 85 ارب روپے لگایا گیا ہے.
کرنٹ کیپٹل آمدنی کا تخمینہ 33 ارب روپے ہے اور فارن پراجیکٹ اسسٹنس کیلئے 27 ارب روپے کا تخمینہ لگایا گیا ہے‘آئندہ مالی سال کے بجٹ میں میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن کی مد میں 10 فیصد اضافے کی تجویز دی گئی ہے. پنجاب کا بجٹ رواں مالی سال2018-19 کے 1831 اعشاریہ ایک ارب روپے کے نظر ثانی شدہ بجٹ سے 18 فیصد زائد ہو گا. ترقیاتی بجٹ کا تخمینہ 350 ارب روپے لگایا گیا ہے.
پنجاب ریونیو اتھارٹی کو آئندہ مالی سال کے لئے ٹیکس وصولی کا ہدف 160 ارب روپے دیا جائے گا، رواں مالی سال پی آر اے کو ٹیکس وصولی کا ہدف 155 اعشاریہ چھ ارب دیا گیا جسے بعد میں نظرثانی کر کے 105 ارب روپے کر دیا گیا ہے، اسی طرح بورڈ آف ریونیو کو آئندہ مالی سال کے لئے ٹیکس وصولی کا ہدف 80 ارب روپے دیا جائے گا، رواں مالی سال کے لئے بورڈ آف ریونیو کا ٹیکس وصولی کا ہدف 75 اعشاریہ 3 ارب روپے تھا جسے نظرثانی کر کے72ارب روپے کر دیا گیا ہے.
مختلف محکموں کو ٹیکس کی مد میں دیئے جانے والے اہداف کے مطابق محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کو ٹیکس وصولی کا ہدف 35 اعشاریہ 7 ارب روپے دیا جائے گا. رواں مالی کے لئے اسے ٹیکس وصولی کا ہدف 37 اعشاریہ 7 ارب روپے ملا تھا، اسی طرح آئندہ مالی سال میں محکمہ انرجی کو 6 اعشاریہ 8 ارب روپے اور محکمہ ٹرانسپورٹ کو 0.7 ارب روپے کی ٹیکس وصولی کا ہدف دیا جائے گا.
دوسری جانب پنجاب اسمبلی کابجٹ اجلاس آج سہ پہر 3 بجے اسپیکر چوہدری پرویز الٰہی کی زیر ِصدارت شروع ہو رہا ہے، اجلاس کے ایجنڈے پر محکمہ ٹرانسپورٹ سے متعلق سوالات دریافت کئے جائیں گے،سرکاری کارروائی میں پنجاب کھل پنچایت آرڈیننس اور پنجاب لینڈ ریونیو ترمیمی آرڈیننس پیش کئے جائیں گے . اجلاس میں پنجاب زکوة وعشر کا ترمیمی بل پیش ہوگا جبکہ پنجاب جوڈیشل اکیڈمی 16-2015اور پنجاب پبلک سروس کمیشن 2017کی سالانہ رپورٹس بھی پیش کی جائیں گی. سرکاری کارروائی میں پنجاب کھال پنچایت آرڈیننس ، پنجاب لینڈ ریونیو ترمیمی آرڈیننس اورپنجاب زکوٰة و عشر ترمیمی بل پیش شامل کرنا ہے. پنجاب جوڈیشل اکیڈمی اورپنجاب پبلک سروس کمیشن کی رپورٹس پیش کرنابھی ایجنڈے کا حصہ ہے.

تاریخ اشاعت : جمعرات 13 جون 2019

Share On Whatsapp