ایف آئی اے اور پی ٹی اے سوشل میڈیا میں گستاخانہ مواد میں ملوث افراد کا سراغ لگائے ، ہائی کورٹ کا فیصلہ

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہاہے کہ ایف آئی اے اور پی ٹی اے سوشل میڈیا میں گستاخانہ مواد میں ملوث افراد کا سراغ لگائے ۔سوشل میڈیا میں اسلام مخالف اور گستاخانہ مواد کے معاملہ پر عدالت عالیہ کے ڈویژن بنچ نے 20 مئی کو انٹرا کورٹ اپیل پر محفوظ فیصلہ سنا دیا۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی نے چار صفحات پر مشتمل ہے۔
ہائی کور ٹ نے فیصلہ سناتے ہوئے کہاکہ ایف آئی اے اور پی ٹی اے سوشل میڈیا میں گستاخی میں ملوث افراد کا سراغ لگائے۔فیصلہ میں کہاگیاکہ سوشل میڈیا میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی گستاخی کے متعلق اسی نوعیت کی ایک پٹیشن پر عدالت عالیہ پہلے ایک جامع فیصلہ جاری کر چکی ہے، عدالت عالیہ سلمان شاہد کیس کے فیصلے میں حکم دے چکی ہے کہ فریقین اس امر کو یقینی بنائیں۔
فیصلہ میں کہاگیاکہ سوشل میڈیا میں کسی بھی قسم کا گستاخانہ مواد کسی بھی صورت اپلوڈ نہ ہو۔ فیصلہ کے مطابق سوشل میڈیا میں توہین رسالت کے متعلق سلمان شاہد کے کیس میں عدالت عالیہ کا فیصلہ جامع اور تمام امور کا احاطہ کرتا ہے، بنیادی طور پر ایف آئی اے اور پی ٹی اے کی ذمہ داری ہے کہ وہ سوشل میڈیا میں گستاخی میں ملوث افراد کے خلاف سخت ترین کارروائی کرے،ایف آئی اے اور پی ٹی اے سوشل میڈیا میں گستاخی میں ملوث افراد کے خلاف ہنگامی بنیادوں پر کارروائی کرے۔
فیصلہ میں کہاگیاکہ عدالت کا رجسٹرار آفس کو توہین رسالت کے متعلق پٹیشنز کے ساتھ منسلک گستاخانہ مواد کو پبلک ریکارڈ کا حصہ نہ بنائے، فیصلے کے مطابق رجسٹرار آفس آئندہ احتیاط کرے کہ توہین رسالت کے متعلق پٹیشنز کے ساتھ منسلک گستاخانہ مواد پبلک ریکارڈ کا حصہ نہ ہو۔

تاریخ اشاعت : بدھ 12 جون 2019

Share On Whatsapp