ورلڈکپ میں پاک بھارت میچ پر پھر سے شکوک و شبہات کے بادل منڈلانے لگے

دھونی کے گلووز کے معاملے پر آئی سی سی کے ایکشن کے بعد سابق بھارتی کرکٹرز نے پاکستان کیخلاف میچ کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کر دیا

لاہور : ورلڈکپ میں پاک بھارت میچ پر پھر سے شکوک و شبہات کے بادل منڈلانے لگے، دھونی کے گلووز کے معاملے پر آئی سی سی کے ایکشن کے بعد سابق بھارتی کرکٹرز نے پاکستان کیخلاف میچ کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق آئی سی سی کی جانب سے بھارتی وکٹ کیپر ایم ایس دھونی کے بھارتی فوج کے لوگو والے گلووز پر پابندی عائد کیے جانے کے بعد اس معاملے پر بھارتی میڈیا اور سابق کرکٹرز نے پاکستان پر اپنا غصہ نکالنا شروع کر دیا ہے۔
بھارتی میڈیا اور سابق بھارتی کرکٹرز نے ورلڈکپ کے دوران پاکستان کیخلاف میچ کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کر دیا ہے۔ اس حوالے سے خدشے کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ شدت پسند مودی سرکار کہیں واقعی پاکستان کیخلاف میچ کا بائیکاٹ نہ کر دے۔ دوسری جانب آئی سی سی نے بھارتی کرکٹ بورڈ کو بالآخر ہتھیار ڈالنے پر مجبور کر دیا۔سابق کپتان نے جنوبی افریقہ کے خلاف میچ میں متنازعہ گلوز استعمال کیے تھے جس پر آئی سی سی نے ایکشن لیتے ہوئے انہیں اس حرکت سے باز رہنے کیلئے کہا جواب میں بھارتی بورڈ نے ڈھٹائی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اعتراض مسترد کردیا تھا۔
بھارتی بورڈ کے ایک عہدے دار ونود رائے کا کہنا ہے کہ دھونی کے گلوز پر نشان آرمی کا ہے اور نہ ہی اس کا کمرشل مقصد کے لیے استعمال کیا گیا ہے تاہم گزشتہ روز آئی سی سی نے اپنی پریس ریلیز میں یہ واضح کردیا کہ قواعد و ضوابط کے تحت مذہبی، سیاسی اور لسانی تعصب کو ہوا دینے والی چیزوں کا کٹ، بیٹ اور گلوز پر استعمال نہیں کیاجاسکتا۔آئی سی سی کا واضح موقف سامنے آنے کے بعد دھونی نے بی سی سی آئی حکام کو بتا دیا ہے کہ وہ اس تنازع کو مزید ہوا نہیں دینا چاہتے اور قواعد و ضوابط کی پابندی کریں گے۔یاد رہے کہ بھارتی ٹیم نے رواں سال 8 مارچ کو پلوامہ واقعہ کو بنیاد بناکر فوجی ٹوپیاں پہن کر میچ بھی کھیلا تھا۔

تاریخ اشاعت : ہفتہ 8 جون 2019

Share On Whatsapp