وزیر صحت نے ہیپاٹائٹس سی کے مریضوں کیلئے ایک انقلابی قدم اٹھاتے ہوئے علاج کیلئے جی سیون تھری ڈسپنسری میں ماڈل سنٹر کا افتتاح کر دیا

دوسرے مرحلے میں پورے اسلام آباد میں ہیپاٹائٹس ’’سی‘‘ اور متعدی امراض سے متاثرمریضوں کا مفت علاج کیا جائے گا، عامر کیانی , بھارت کی نیت کو اچھی طرح سمجھتے ہیں،بھارت کی جانب سے دوائیں نا ملنے سے پاکستان کو کوئی فرق نہیں پڑیگا، میڈیا سے گفتگو

اسلام آباد : وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں وزیر صحت عامر محمود کیانی نے ہیپاٹائٹس سی کے مریضوں کیلئے ایک انقلابی قدم اٹھاتے ہوئے علاج کیلئے جی سیون تھری ڈسپنسری میں ماڈل سنٹر کا افتتاح کر دیا گیا ۔ وفاقی وزیر صحت عامر کیانی نے کہاکہ سنٹر میں ہیپاٹائٹس ’’سی‘‘ فری منصوبے کے تحت مفت ٹیسٹ اور علاج کی سہولت فراہم کر دی گئی۔ عامر محمود کیانی نے کہاکہ اس ماڈل سنٹر میں ٹی بی کی سکریننگ اور اس کا مفت علاج ھو گا ۔
عامر کیانی نے کہاکہ پاکستان میں تقریباً ایک کروڑ افراد ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا یا اس کا شکار ہیں ۔عامر محمود کیانی نے کہاکہ پاکستان میں ہیپاٹائٹس سی کا بوجھ دنیا بھر میں دوسرے نمبر پر ہے ۔عامر کیانی نے کہا کہ وزارت صحت متعدی امراض پر قابو پانے کے ھنگامی بنیادوں پر کام کر رہی ھے ۔عامر کیانی نے کہا کہ ہپٹاٹائٹس ’’سی‘‘ فری علاج منصوبے کے تحت پہلے مرحلے میں کچی بستیوں میں ہیٹاٹائٹس کے مریضوں کو مفت ٹیسٹ اور مفت ادویات فراہم کی جائیں گی ۔
عامر کیانی نے کہاکہ دوسرے مرحلے میں پورے اسلام آباد میں ہیپاٹائٹس ’’سی‘‘ اور متعدی امراض سے متاثرمریضوں کا مفت علاج کیا جائے گا ۔عامر کیانی نے کہاکہ پولی کلینک کی ڈسپنسری جی سیون تھری میں قائم ہیپاٹائٹس سنٹر میں جین ایکسپرٹ ٹیسٹ مشین نصب کی ھے ۔عامر کیانی نے کہاکہ اسلام آباد کی کچی بستیوں میں گھر گھر جا کر ہیپاٹائٹس ’’ سی کے ٹیسٹ کئے جائیں گے ۔
عامر محمود کیانی نے کہا کہ مریضوں کو ہیپاٹائٹس سنٹر میں رجسٹرڈ کیا جائے گا جہاں انہیں مفت علاج اور ادویات فراہم کی جائیں گی ۔عامر کیانی نے کہاکہ اسلام آباد میں ہیپاٹائٹس سی کے مریضوں کا مفت علاج اور ویکسی نیشن کی جائیگی۔ عامر کیانی نے کہاکہ صحت کے شعبے میں بہتری لانے کے انقلابی تبدیلیاں لا رہے ہیں ۔عامر کیانی نے کہاکہ عام آدمی کو طبی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے ہرممکن اقدامات کر رہے ہیں ۔
عامر کیانی نے کہاکہ تحریک انصاف کی حکومت انسانوں کی فلاح و بہبود اور صحت پر وسائل خرچ کر رہی ہے ۔عامر کیانی نے کہاکہ ماضی میں صحت کے شعبہ کو نظر انداز کیا،صحت کے شعبے میں ہونے والی ترقی کے ثمرات عوام تک پہنچنا شروع ہوگئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ پی ایم ڈی سی اور ڈریپ کے مسائل ہیں، ہم نے دونوں ادراوں کا فورنزک آڈٹ کروانے کا کہا ہے ۔
وزیر صحت نے کہاکہ ڈریپ کا نیا قانون ہے ، ڈریپ کیبنٹ کے پاس ہے ۔ انہوںنے کہا کہ بورڈ اف گورنر بنا رہے ہیں، 5 چھ ماہ میں اداروں کو ٹھیک کرینگے ۔ انہوںنے کہاکہ شفافیت اور میریٹ ہماری ترجیح ہے۔ وزیر صحت نے کہا کہ بھارت کی نیت کو اچھی طرح سمجھتے ہیں،فارماسیوٹیکل کمپنیوں کے ساتھ ملکر ہم نے دواؤں کی فراہمی کو یقینی بنانے پر حکمت عملی بنائی ہے۔ انہوںنے کہا کہ بھارت کی جانب سے دوائیں نا ملنے سے پاکستان کو کوئی فرق نہیں پڑیگا

تاریخ اشاعت : ہفتہ 2 مارچ 2019

Share On Whatsapp